[اعدادوشمار] پاکستان اور داستان رنز کے دفاع کی

سری لنکا کے خلاف پہلے ٹی ٹوئنٹی مقابلے میں پاکستان کا باآسانی کامیابی حاصل کرنا، بالکل بھی حیران کن نہیں تھا۔ خاص طور پر اس وقت جب پاکستان نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 175 رنز کا بھاری مجموعہ اکٹھا کرلیا تھا۔ شاذونادر ہی ایسا ہوا ہے کہ پاکستان نے کسی ٹی ٹوئنٹی مقابلے میں پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 150 رنز سے زیادہ اکٹھے کیے ہوں اور اس کے باوجود شکست کھائی ہو۔ بلکہ اگر اعدادوشمار کے مطابق بات کی جائے تو 24 مقابلوں میں صرف ایک بار ایسا ہوا ہے کہ پاکستان 150 سے زیادہ رنز کا دفاع نہ کر پایا ہو۔

یہ حقیقت پاکستان کی عمدہ باؤلنگ کو ظاہر کرنے کے لیے کافی ہے۔ آج کی انتہائی تیز کرکٹ میں، جہاں 20 اوورز میں 150 رنز کوئی بہت بڑا ہدف نہیں سمجھے جاتے، پاکستان کو8 سالوں میں صرف ایک بار کسی ٹیم کو یہاں تک پہنچنے دیا ہے۔ لیکن بدقسمتی دیکھیں کہ یہی بہت بڑا مقابلہ تھا۔ جی ہاں! پاکستان کو 150 سے زیادہ رنز کا دفاع کرتے ہوئے واحد شکست ایک بہت ہی اہم مقابلے میں ہوئی تھی۔ چند اشاروں سے آپ بھی سمجھ جائیں گے۔ سعید اجمل بمقابلہ مائیکل ہسی اور آخری اوور، یاد آ گیا ناں؟ جی ہاں، ہم ورلڈ ٹی ٹوئنٹی 2010ء کے سیمی فائنل کی بات کررہے ہیں۔

14 مئی 2010ء کو سینٹ لوشیا میں ہونے والے اس سیمی فائنل میں پاکستان کی کامیابی 19 اوورز تک یقینی تھی۔ ایک تو پاکستان نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 191 رنز کا بہت بڑا مجموعہ کھڑا کر ڈالا تھا اور پھر 17 اوورز میں آسٹریلیا کے 144 رنز پر 7 کھلاڑیوں کو آؤٹ بھی کردیا تھا۔ لیکن صرف مائیکل ہسی نے بازی پلٹ کر دکھا دی۔ ان کے محض 24 گیندوں پر بنائے گئے 60 رنز نے آسٹریلیا کو آخری اوور کی پانچویں گیند پر جتوا دیا اور پہلی بار ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے فائنل تک پہنچا دیا۔ وہ الگ بات کہ وہ وہاں کامیابی حاصل نہ کرسکا لیکن کم از کم پاکستان کو تو اعزاز کی دوڑ سے باہر کردیا۔ آخری اوور میں آسٹریلیا کو جیتنے کے لیے 18 رنز کی ضرورت تھی اور گیند 'جادوگر اسپنر' سعید جمل کے ہاتھ میں تھی۔ مچل جانسن نے پہلی گیند پر رن دوڑا اور ذمہ داری مائیکل ہسی کے کاندھوں پر آ گئی۔ انہوں نے مسلسل دو چھکے اور ایک چوکا لگانے کے بعد پانچویں گیند پر ایک اور چھکا رسید کرتے ہوئے آسٹریلیا کو مقابلہ جتوا دیا۔ سعید اجمل، بلکہ پاکستان کے تمام شائقین، سر پکڑ کر بیٹھ گئے کہ یہ آخر ہوا کیا؟ ہسی تن تنہا آسٹریلیا کو مقابلہ جتوا گئے۔

Mike-Hussey

بہرحال، سانپ گزر چکا، اب لکیر پیٹنے کا کوئی فائدہ نہیں۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ اس مقابلے سے پہلے، اور نہ ہی اس کے بعد، پاکستان 150 سے زیادہ رنز کے دفاع میں کبھی ناکام نہیں ہوا۔ ستمبر 2012ء میں آسٹریلیا کے خلاف دبئی میں ہونے والا ایک سنسنی خیز مقابلہ بھی پاکستان کی ایسی ہی یادگار فتوحات میں سے ایک ہے۔ پاکستان نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 4 وکٹوں پر 151 رنز بنائے اور جب آسٹریلیا کو آخری 5 اوورز میں محض 43 رنز کی ضرورت تھی تو عمر گل نے مائیکل ہسی کو آؤٹ کرکے آسٹریلیا کی پیشرفت کو کاری ضرب لگائی۔ اس کے باوجود جارج بیلی کی عمدہ بلے بازی اور آخری اوور میں عبد الرزاق کی ناقابل یقین باؤلنگ نے میچ کو سنسنی خیزی کی آخری حدوں تک پہنچا دیا۔ پانچویں گیند پر پیٹرک کمنز کے چھکے کے ساتھ ہی مقابلہ برابر ہوگیا لیکن آخری گیند پر، جب آسٹریلیا کو جیتنے کے لیے محض ایک رن کی ضرورت تھی، کمنز آؤٹ ہوگئے اور یوں مقابلہ برابر ہوگیا اور فیصلہ سپر اوورز میں ہوا۔

سپر اوور میں آسٹریلیا نے پہلے بلے بازی کی اور عمر گل نے سوائے ایک چوکا کھانے کے کوئی اور غلطی نہ کی۔ پاکستان کو جیتنے کے لیے 12 رنز کا ہدف ملا اور عمر اکمل اور عبد الرزاق اس ہدف کو حاصل کرنے کے لیے میدان میں اترے۔ دوسری گیند پر عمر اکمل اور چوتھی پر عبد الرزاق کے چوکے نے معاملہ آسان کردیا لیکن پانچویں گیند پر صرف ایک رن بننے کے بعد صورتحال یہ ہوگئی کہ پاکستان کو آخری گیند پر دو رنز کی ضرورت تھی۔ کمنز سے یہاں پھر غلطی ہوئی، جو اس بار باؤلنگ کررہے تھے، انہوں نے وائیڈ پھینک دی اور مقابلہ برابر ہوگیا۔ آخری گیند پر عمر اکمل رن آؤٹ سے بچتے ہوئے فاتحانہ رن دوڑنے میں کامیاب ہوگئے اور فتح کا ایک زبردست جشن منایا۔ پاکستان نے اس فتح کے ساتھ سیریز بھی دو-صفر سے جیت لی۔

اس بات کو دنیا کی تمام ٹیموں کو یاد رکھنا چاہیے کہ اگر پاکستان کسی ٹی ٹوئنٹی میں پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 150 سے زیادہ رنز بنا لے، تو اس کے دو ہی مطلب نکلتے ہیں، 95 فیصد تو امکان پاکستان کے جیتنے کے ہے، لیکن بقیہ پانچ فیصد پر بھی یہ یقین ہے کہ میچ انتہائی سنسنی خیز ہوگا جیسا کہ مذکورہ دونوں مقابلے رہے۔

امید ہے کہ پاکستان سری لنکا کے خلاف دوسرے ٹی ٹوئنٹی میں بھی کامیابی حاصل کرکے عالمی درجہ بندی میں تیسرا مقام حاصل کرلے گا۔ دیکھتے ہیں، یکم اگست کو کولمبو میں پاکستان کیا کارنامہ دکھاتا ہے۔

رنز نتیجہ فتح/شکست کا مارجن بمقابلہ بمقام بتاریخ
پاکستان 191 فتح 30 رنز بنگلہ دیش نیروبی 2 ستمبر 2007ء
پاکستان 171 فتح 51 رنز اسکاٹ لینڈ ڈربن 12 ستمبر 2007ء
پاکستان 189 فتح 33 رنز سری لنکا جوہانسبرگ 17 ستمبر 2007ء
پاکستان 203 فتح 102 رنز بنگلہ دیش کراچی 20 اپریل 2008ء
پاکستان 175 فتح 82 رنز نیدرلینڈز لارڈز 9 جون 2009ء
پاکستان 159 فتح 39 رنز آئرلینڈ اوول 15 جون 2009ء
پاکستان 172 فتح 52 رنز سری لنکا کولمبو 12 اگست 2009ء
پاکستان 161 فتح 49 رنز نیوزی لینڈ دبئی 12 نومبر 2009ء
پاکستان 153 فتح 7 رنز نیوزی لینڈ دبئی 13 نومبر 2009ء
پاکستان 172 فتح 21 رنز بنگلہ دیش گروس آئی لیٹ یکم مئی 2010ء
پاکستان 191 شکست 3 وکٹ آسٹریلیا گروس آئی لیٹ 14 مئی 2010ء
پاکستان 167 فتح 23 رنز آسٹریلیا برمنگھم 5 جولائی 2010ء
پاکستان 162 فتح 11 رنز آسٹریلیا برمنگھم 6 جولائی 2010ء
پاکستان 183 فتح 103 رنز نیوزی لینڈ کرائسٹ چرچ 30 دسمبر 2010ء
پاکستان 198 فتح 85 رنز زمبابوے ہرارے 16 ستمبر 2011ء
پاکستان 151 برابر - آسٹریلیا دبئی 7 ستمبر 2012ء
پاکستان 177 فتح 13 رنز نیوزی لینڈ پالی کیلے 23 ستمبر 2012ء
پاکستان 195 فتح 95 رنز جنوبی افریقہ سنچورین 3 مارچ 2013ء
پاکستان 161 فتح 25 رنز زمبابوے ہرارے 23 اگست 2013ء
پاکستان 179 فتح 19 رنز زمبابوے ہرارے 24 اگست 2013ء
پاکستان 176 فتح 6 رنز جنوبی افریقہ کیپ ٹاؤن 22 نومبر 2013ء
پاکستان 191 فتح 16 رنز آسٹریلیا ڈھاکہ 23 مارچ 2014ء
پاکستان 190 فتح 50 رنز بنگلہ دیش ڈھاکہ 30 مارچ 2014ء
پاکستان 175 فتح 29 رنز سری لنکا کولمبو 30 جولائی 2015ء

Facebook Comments