ٹام لیتھم 'بیٹ کیری' کرنے والے نیوزی لینڈ کے پہلے بلے باز

دھرم شالا کے خوبصورت میدان پر بھارت کے خلاف پہلے ایک روزہ میں نیوزی لینڈ کی تو ایک نہ چلی، پوری ٹیم صرف 190 رنز پر ڈھیر ہوگئی لیکن اس مایوس کن کارکردگی کے دوران اوپنر ٹام لیتھم ایک کنارے سے جمے رہے، یہاں تک کہ نئی تاریخ رقم کرگئے۔ ٹام 'بیٹ کیری' کرنے والے تاریخ کے چند بلے بازوں میں شامل ہوگئے ہیں۔

بھارت کے ہردیک پانڈيا اور امیش یادو نے ٹاپ آرڈر پر قہر برسا کر کپتان مہندر سنگھ دھونی کا فیصلہ درست ثابت کیا۔ نیوزی لینڈ کے 7 بلے باز صرف 65 رنز میدان سے واپس آ چکے تھے جن میں سے تین روس ٹیلر، لیوک رونکی اور مچل سینٹنر صفر کی ہزیمت سے دوچار ہوئے۔ اس کے بعد لیتھم نے آخری تین وکٹوں کے ساتھ قابل ذکر مزاحمت کی۔ انہوں نےڈوگ بریسویل کے ساتھ مل کر 41 رنز جوڑے اور پھر ٹم ساؤتھی کے ساتھ 71 رنز کی قیمتی شراکت قائم کی۔ یہاں تک کہ 44 ویں اوور میں ایش سودھی کے آؤٹ ہوتے ہی اننگز 190 رنز پر مکمل ہوگئی۔ یوں پوری ٹیم لیتھم کی نظروں کے سامنے آؤٹ ہوئے اور وہ ٹام لیتھم نیوزی لینڈ کی تاریخ کے پہلے اور مجموعی طور پر دسویں بیٹسمین بنے کہ جنہیں کسی ایک روزہ مقابلے میں بیٹ کیری کرنے کا اعزاز حاصل ہوا۔ کرکٹ میں بیٹ کیری کرنے کی اصطلاح تب استعمال ہوتی ہے جب کوئی بلے باز اوپنر کی حثیت سے آئے اور پوری اننگز مکمل ہو جانے کے بعد بھی ناقابل شکست میدان سے واپس آئے۔ لیتھم نے 98 گیندوں پر 7 چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے ناٹ آؤٹ 79 رنز بنائے۔

یہ بھی پڑھیں:  [ریکارڈز] پہلے ون ڈے میں سنچری

ایک روزہ کرکٹ میں پہلی بار زمبابوے کے گرانٹ فلاور نے بیٹ کیری کیا تھا۔ دسمبر 1994ء میں ورلڈ سیریز کے ایک مقابلے میں انہوں نے انگلستان کے خلاف یہ کارنامہ انجام دیا تھا۔ زمبابوے کی پوری ٹیم 205 رنز پر آؤٹ ہوئی جبکہ گرانٹ فلاور 84 رنز پر ناٹ آؤٹ رہے۔

Amit-Mishra

پاکستان کے سعید انور نے فروری 1995ء میں ہرارے میں زمبابوے کے خلاف ناٹ آؤٹ 103 رنز بنا کر بیٹ کیری کیا تھا اور یوں پہلے پاکستانی بنے۔ پاکستان کی طرف سے دوسری بار یہ کارنامہ کس بلے باز نے ادا کیا؟ نیچے فہرست میں دیکھیں:

ایک روزہ میں بیٹ کیری کرنے والے بلے باز

بلے باز رنز ٹیم ٹوٹل بمقابلہ بمقام بتاریخ
گرانٹ فلاور 84* 205 انگلستان سڈنی 15 دسمبر 1994ء
سعید انور 103* 219 زمبابوے ہرارے 22 فروری 1995ء
نک نائٹ 125* 246 پاکستان ناٹنگھم یکم ستمبر 1996ء
رڈلی جیکبز 49* 110 آسٹریلیا مانچسٹر 30 مئی 1999ء
ڈیمین مارٹن 116* 191 نیوزی لینڈ آکلینڈ 3 مارچ 2000ء
ہرشل گبز 59* 101 پاکستان شارجہ مارچ 2000ء
ایلک اسٹیورٹ 100* 192 ویسٹ انڈیز ناٹنگھم 20 جولائی 2000ء
جاوید عمر 33* 103 زمبابوے ہرارے 8 اپریل 2001ء
اظہرعلی 81* 199 سری لنکا کولمبو 16 جون 2012ء
ٹام لیتھم 79* 190 بھارت دھرم شالا 16 اکتوبر 2016ء

Facebook Comments