محمد حفیظ نے کلینڈر ایئر میں 1 ہزار رنز کا سنگ میل عبور کرلیا

پاکستانی ٹیم کے مستند اوپننگ بلے باز محمد حفیظ نے رواں سال 1000 رنز بنا کر اپنا نام کیلنڈر ایئر میں 1 ہزار سے زائد رنز بنانے والے بلے بازوں کی فہرست میں درج کروالیا۔ انہوں نے یہ اعزاز سری لنکا کے خلاف دبئی میں جاری ہوم سیریز کے چوتھے میچ میں حاصل کیا۔ اس سنگ میل کو عبور کرنے کے لیے محمد حفیظ نے 28 ایک روزہ مقابلوں میں 40.28 کی اوسط سے رنز بنائے جن میں 3 سنچریوں اور 5 نصف سنچریوں بھی اسکور کیں۔

گزشتہ سال سابق پاکستانی کپتان اور اوپنر سلمان بٹ کی اسپاٹ فکسنگ معاملے میں ملوث ہونے کے باعث ٹیم سے بے دخل کیئے جانے کے بعد محمد حفیظ کو ٹیم میں شامل کیا گیا تو پاکستانی کرکٹ ٹیم ایک انتہائی نازک دور سے گزر رہی تھی۔ اس موقع پر محمد حفیظ نے نہ صرف بطور اوپنر ذمہ داریاں سنبھالیں بلکہ انتہائی سمجھداری سے کھیلتے ہوئے پاکستانی ٹیم کے لئے کئی ایک اہم کامیابیاں بھی سمیٹیں۔

31 سالہ محمد حفیظ کے لیے سال 2011ء کا آغاز نسبتاً مایوس کن رہا جس کے پہلے میچ ہی میں انہیں صفر کی ہزیمت اٹھانا پڑی۔ البتہ نیوزی لینڈ کے خلاف اسی سیریز کے تیسرے مقابلے میں انہوں نے اپنی پہلی سنچری داغ کر ٹیم کو فتح دلوائی اور میچ کے بہترین کھلاڑی کا اعزاز بھی حاصل کیا۔ بعد ازاں عالمی کپ 2011ء میں بھی محمد حفیظ نے تین قابل ذکر اننگز جو ان کے لئے ایک نئے مستقبل کی نوید تھی۔

عالمی کپ کے بعد دورۂ ویسٹ انڈیز میں محمد حفیظ نے دو نصف سنچریوں سمیت ایک سنچری بنائی اور سیریز کے بہترین کھلاڑی بھی قرار پائے۔ پھر دورہ آئیرلینڈ میں ایک نصف سنچری میں بھی داغی۔ محمد حفیظ کی جانب سے سال بہترین اننگز زمبابوے میں کھیلی گئی جہاں انہوں نے زمبابوے کے خلاف شکست 139 رنز بنائے اور میچ کے بہترین کھلاڑی کا اعزاز بھی اپنے نام کیا۔ یہ بلاشبہ ان کے مکمل کیریئر کی بھی سب سے بہترین اننگز کہی جاسکتی ہے۔ اسی دورے کے دوران محمد حفیظ نے ساتھی کھلاڑی عمران فرحت کے ہمراہ ریکارڈ شراکت داری بھی قائم کی۔

رواں سال محمد حفیظ کی بلے بازی کا اننگز وار جائزہ

مکمل میچ کی تفصیل پڑھنے کے لیے تاریخ پر کلک کریں

شمار رنز تاریخ بمقابلہ بمقام چوکے چھکے اسٹرائیک ریٹ
1 0 22 جنوری 2011ء نیوزی لینڈ ویلنگٹن 0 0 0.00
2 26 جنوری 2011ء نیوزی لینڈ کوئنزٹاؤن 0 0 36.36
3 115 26 جنوری 2011ء نیوزی لینڈ کرائسٹ چرچ 12 2 79.86
4 12 یکم فروری 2011ء نیوزی لینڈ نیپئر 2 0 52.17
5 14 3 فروری 2011ء نیوزی لینڈ ہیملٹن 2 0 70.00
6 21 5 فروری 2011ء نیوزی لینڈ آکلینڈ 2 1 140.00
7 9 23 فروری 2011ء کینیا ہمبنٹوٹا 1 0 45.00
8 32 26 فروری 2011ء سری لنکا کولمبو 4 1 103.22
9 11 3 مارچ 2011ء کینیڈا کولمبو 2 0 91.66
10 5 8 مارچ 2011ء نیوزی لینڈ پالی کیلے 1 0 83.33
11 49 14 مارچ 2011ء زمبابوے پالی کیلے 6 0 75.38
12 5 19 مارچ 2011ء آسٹریلیا کولمبو 1 0 62.50
13 61 23 مارچ 2011ء ویسٹ انڈیز ڈھاکہ 10 0 95.31
14 43 30 مارچ 2011ء بھارت موہالی 7 0 72.88
15 54 23 اپریل 2011ء ویسٹ انڈیز گروس آئی لیٹ، سینٹ لوشیا 7 1 120.00
16 32 25 اپریل 2011ء ویسٹ انڈیز گروس آئی لیٹ، سینٹ لوشیا 1 1 62.74
17 5 28 اپریل 2011ء ویسٹ انڈیز برج ٹاؤن، بارباڈوس 1 0 55.55
18 121 2 مئی 2011ء ویسٹ انڈیز برج ٹاؤن، بارباڈوس 7 3 87.68
19 55 5 مئی 2011ء ویسٹ انڈیز پروویڈنس، گیانا 6 0 66.26
20 52 28 مئی 2011ء آئرلینڈ بیلفاسٹ 7 1 61.90
21 0 30 مئی 2011ء آئرلینڈ بیلفاسٹ 0 0 0.00
22 26 8 ستمبر 2011ء زمبابوے بلاوایو 2 1 53.06
23 139٭ 11 ستمبر 2011ء زمبابوے ہرارے 13 1 94.55
24 23 14 ستمبر 2011ء زمبابوے ہرارے 4 0 109.52
25 5 11 نومبر 2011ء سری لنکا دبئی 1 0 83.33
26 4 14 نومبر 2011ء سری لنکا دبئی 1 0 133.33
27  83 18 نومبر 2011ء  سری لنکا  دبئی 9 1 82.17
28  27 20 نومبر 2011ء  سری لنکا  دبئی 3 0 52.94
کل 1007 112 13 78.54

Facebook Comments