پاکستان سپر لیگ، یادیں پچھلے سال کی

0 1,663

پاکستان سپر لیگ کی آمد آمد ہے، کرکٹ کا بخار آہستہ آہستہ زور پکڑتا جارہا ہے اور اس مرتبہ یہ اپنے عروج پر پہنچے گا کیونکہ ہمیں پی ایس ایل3 میں نظر آئیں گی بہت سی تبدیلیاں۔ دفاعی چیمپیئن پشاور زلمی فین فیورٹ تھا کیونکہ اس میں تھے شاہد خان آفریدی، لیکن اس بار وہ کراچی کنگز کا حصہ ہیں جبکہ یہ کیون پیٹرسن کا آخری سیزن ہوگا جو کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی جانب سے کھیلنے کے بعد کرکٹ کو خیرباد کہہ دیں گے لیکن اس سے پہلے کوشش کریں گے کہ کوئٹہ کو اس بار ٹائٹل جتوائیں جو دو مرتبہ فائنل میں شکست سے دوچار ہوا۔

اب ایک نئے آغاز سے پہلے وقت ہے پچھلے سیزن کچھ یادیں تازہ کرنے کا جو ہر لحاظ سے ایک کامیاب سیزن تھا۔ اس سے بڑھ کر کامیابی کا ثبوت کیا ہوگا کہ پی ایس ایل 2 نے پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ کی واپسی کی راہ ہموار کی۔ ایسا کام جو 8 سال تک نہیں ہو سکا، صرف ایک پی ایس ایل فائنل کے انعقاد سے ہوگیا۔ امید ہے کہ پی ایس ایل2 کہیں زیادہ بڑا اور کہیں زیادہ بہتر ہوگا لیکن حقیقت یہ ہے کہ پی ایس ایل 2017ء کی کئی یادیں ایسی ہیں جو ہمیشہ ذہن میں محفوظ رہیں گی۔

صفحہ نمبر 3 :
دانتوں تلے پسینہ
  • 1. بیٹ ڈراپ
  • 2. سمیع کا بدلہ
  • 3. دانتوں تلے پسینہ
  • 4. سیمی سیلفی
  • 5. پاکستان کا 'ایل کلاسیکو' اور پولارڈ
  • 6. چھکا! چھکا! چھکا! چھکا!
  • 7. اج تے ہوگئی کامی کامی!

3. دانتوں تلے پسینہ

ویسے آپ سوچیں اگر کوئی ٹیم صرف 59 رنز پر آل آؤٹ ہو جائے تو جواب میں کیا ہوگا؟ ہدف کا تعاقب کرنے والے کو تو 10 وکٹوں سے جیتنا چاہیے۔ لیکن پی ایس ایل2 میں لاہور-پشاور مقابلے میں ایسا نہیں ہوا۔ پہلے قلندرز صرف 59 رنز پر ڈھیر ہوئے لیکن یاسر شاہ کے جادو کی وجہ سے ان کی دھمال کہیں تیز ہوگئی۔ صرف 7 رنز پر چار زلمی آؤٹ ہوچکے تھے۔ یہاں پر ایون مورگن نے 23 رنز بنا کر پشاور کی عزت بچا لی اور وہ تین وکٹوں سے جیت گیا ورنہ ایسی شکست کے بعد تو پشاور کہیں کا نہ رہتا۔ ویسے یاسر شاہ کی وکٹوں پر جو جشن منایا گیا تھا، وہ واقعی پی ایس ایل 2 کے یادگار ترین لمحات میں سے ایک تھا۔ ویسے سوچیں، اگر پشاور زلمی واقعی ہار جاتا تو کیا بعد میں چیمپیئن بن پاتا؟

تبصرہ کیجیے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا