آج پاکستان کرکٹ تاریخ کا یادگار ترین دن

0 541

یقین نہیں آتا کہ اس یادگار دن کو آج 30 سال گزر گئے ہیں۔ یہ 1992ء میں 25 مارچ ہی کا دن تھا جب پاکستان نے پہلی بار ورلڈ کپ جیتا تھا۔ ایک ایسا کارنامہ جو پاکستان نہ پہلے کبھی انجام دے پایا اور نہ اس کے بعد کبھی کر سکا۔

پاکستان نے ورلڈ کپ کا آغاز ممکنہ حد تک بھیانک طریقے سے کیا تھا۔ ویسٹ انڈیز کے خلاف 10 وکٹوں کی شکست سے لے کر انگلینڈ کے خلاف 72 رنز پر ڈھیر ہو جانے تک۔ معاملہ یہاں تک آ گیا کہ سیمی فائنل تک رسائی کے لیے پاکستان کو نہ صرف اپنے باقی ماندہ تمام میچز جیتنا تھے بلکہ دیگر مقابلوں کے نتائج کا انتظار بھی کرنا تھا۔

جی ہاں! صورتِ حال یہ تھی کہ پاکستان کو راؤنڈ رابن مرحلے کے اپنے آخری میچ میں نیوزی لینڈ کو شکست دینا تھی، اُس نیوزی لینڈ کو کہ جو تب تک کسی سے ایک میچ بھی نہیں ہارا تھا۔ پھر یہی کافی نہیں تھا بلکہ آسٹریلیا اور ویسٹ انڈیز کے میچ کا بھی انتظار کرنا تھا۔ بقول انضمام الحق کے ہم نے زندگی میں کبھی آسٹریلیا-ویسٹ انڈیز میچ اتنے انہماک کے ساتھ نہیں دیکھا ہوگا، جتنا اس روز دیکھا۔ اور پھر پاکستان کی توقع کے عین مطابق میزبان آسٹریلیا نے ویسٹ انڈیز کے بڑھتے قدم روک لیے اور اس میچ میں کامیابی حاصل کر کے پاکستان کی سیمی فائنل کی راہیں ہموار کر دیں جو پہلے ہی نیوزی لینڈ کو اہم ترین میچ میں شکست دے چکا تھا۔

ورلڈ کپ 1992ء - پوائنٹس ٹیبل

میچزجیتےہارےپوائنٹسنیٹ رن ریٹ
نیوزی لینڈ871140.592
انگلینڈ852110.470
جنوبی افریقہ853100.138
پاکستان84390.166
آسٹریلیا84480.201
ویسٹ انڈیز84480.076
بھارت82550.137
سری لنکا 8255‎-0.686
زمبابوے 8172‎-1.142

پاکستان کا سیمی فائنل اسی نیوزی لینڈ کے ساتھ پڑا جہاں پاکستان نے انضمام الحق کی ناقابلِ یقین بلے بازی کی مدد سے ناقابلِ یقین کامیابی حاصل کی اور یوں پہلی بار ورلڈ کپ فائنل تک پہنچ گیا۔

‏25 مارچ 1992ء کو میلبرن کے میدان میں ریکارڈ 87 ہزار سے زیادہ تماشائی اس میچ کو دیکھنے کے موجود تھے جب عمران خان نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کا فیصلہ کیا اور عامر سہیل کی وکٹ جلد گرنے کے بعد عمران خان خود میدان میں آئے اور 72 رنز کی قائدانہ اننگز کھیلی۔ جاوید میانداد نے 58، انضمام الحق نے 42 اور وسیم اکرم نے تیز رفتار 33 رنز کے ساتھ اپنا بھرپور حصہ ڈالا۔

پاکستان آخری چھ اوورز میں 52 رنز بنانے میں کامیاب ہوا جو اُس زمانے کے لحاظ سے بہت زیادہ تھے اور یہی فیصلہ کُن مرحلہ ثابت ہوا۔

‏250 رنز کے ہدف کے تعاقب میں انگلینڈ کا ٹاپ آرڈر بالکل سنبھل نہیں پایا۔ این بوتھم وسیم اکرم کی گیند پر آؤٹ ہوئے جبکہ ایلک اسٹیورٹ کو عاقب جاوید نے آؤٹ کیا۔ پھر مشتاق احمد نے حریف کپتان گراہم گوچ کو آؤٹ کیا کہ جن کا خوبصورت کیچ عاقب جاوید نے لیا۔

صرف 69 رنز پر انگلینڈ کی چار وکٹیں گر چکی تھیں اور انہیں باقی ماندہ تقریباً 29 اوورز میں 181 رنز درکار تھے جو ناممکن نہیں لیکن مشکل ضرور تھے۔ یہاں ایلن لیمب اور نیل فیئر برادر نے انگلینڈ کو میچ میں واپس لانے کی آخری کوشش کی۔ انہوں نے صرف 14 اوورز میں 72 رنز بنا ڈالے اور معاملہ آخری 16 اوورز میں 109 رنز تک پہنچا دیا۔

یہاں کپتان عمران خان وسیم اکرم کو گیند تھمائی جنہوں نے دو مسلسل گیندوں پر ایلن لیمب اور کرس لوئس کو آؤٹ کر کے تہلکہ مچا دیا۔ لیمب ایک خوبصورت آؤٹ سوئنگنگ ڈلیوری جبکہ کرس لوئس ایک ناقابلِ یقین ان سوئنگنگ گیند پر کلین بولڈ ہوئے۔

فیصلہ ہو چکا تھا! پاکستان کا عالمی چیمپیئن بننا طے تھا بس اب صرف اُس لمحے کا انتظار تھا جو بالآخر آخری اوور میں آیا جب رے النگورتھ نے عمران خان کی گیند پر رمیز راجا کو کیچ دے دیا اور یوں پاکستان 22 رنز سے جیت کر نیا عالمی چیمپیئن بن گیا۔

وسیم اکرم میچ کے بہترین کھلاڑی قرار پائے، اپنی تین قیمتی وکٹوں اور بلے بازی میں بھی جوہر دکھانے کی بدولت۔ لیکن اس دن کے اصل ہیرو عمران خان تھے جنہوں نے اس ٹوٹے ہوئے خواب کو دوبارہ جوڑ کر دکھا دیا جو ورلڈ کپ 1987ء کے سیمی فائنل میں لاہور کے میدان پر چکنا چور ہو گیا تھا۔

بد قسمتی سے پاکستان اُس دن کے بعد سے آج تک کبھی دوبارہ ورلڈ کپ نہیں جیت سکا۔ 1996ء میں وہ روایتی حریف بھارت کے ہاتھوں 'بہت بے آبرو ہو کر' نکالا گیا۔ 1999ء میں فائنل تک پہنچا لیکن آسٹریلیا کے ہاتھوں بُری طرح شکست کھائی جبکہ 2003ء اور 2007ء کے ورلڈ کپ تو بہت بھیانک تھے، جہاں پہلے ہی مرحلے میں پاکستان کا سفر تمام ہوا۔ 2011ء میں سیمی فائنل میں پھر بھارت آڑے آ گیا، 2015ء میں کوارٹر فائنل تک پہنچا لیکن آسٹریلیا نے آگے نہ جانے دیا جبکہ 2019ء میں کھیلے گئے آخری ورلڈ کپ میں پاکستان تمام تر کوشش کے باوجود محض نیٹ رن ریٹ کی وجہ سے سیمی فائنل کی دوڑ سے باہر ہو گیا۔

ورلڈ کپ 1992ء - فائنل

پاکستان بمقابلہ انگلینڈ

25 مارچ 1992ء

بمقام: میلبرن کرکٹ گراؤنڈ، میلبرن، آسٹریلیا

نتیجہ: پاکستان 22 رنز سے جیت گیا

میچ کے بہترین کھلاڑی: وسیم اکرم

سیریز کے بہترین کھلاڑی: مارٹن کرو

پاکستانرگچچھ
عامر سہیلک اسٹیورٹ ب پرنگل41900
رمیز راجہایل بی ڈبلیو ب پرنگل82610
عمران خانک النگورتھ ب بوتھم7211051
جاوید میاندادک بوتھم ب النگورتھ589840
انضمام الحقب پرنگل423540
وسیم اکرمرن آؤٹ331840
سلیم ملکناٹ آؤٹ0100
فاضل رنز32   
مجموعہ‏50 اوورز249-6   
انگلستان (گیند بازی)امرو
ڈیرک پرنگل102223
کرس لوئس102520
این بوتھم70421
فل ڈیفریٹس101420
رے النگورتھ100501
ڈرمٹ ریو30220
انگلینڈ (ہدف: 313 رنز)رگچچھ
گراہم گوچک عاقب ب مشتاق296610
این بوتھمک معین ب وسیم0600
ایلک اسٹیورٹک معین ب عاقب71610
گریم ہکایل بی ڈبلیو ب مشتاق173610
نیل فیئربرادرک معین ب عاقب627030
ایلن لیمبب وسیم314120
کرس لوئسب وسیم0100
ڈرمٹ ریوک رمیز ب مشتاق153200
ڈیرک پرنگلناٹ آؤٹ181610
فل ڈیفریٹسرن آؤٹ10800
رے النگورتھک رمیز ب عمران141020
فاضل رنز24   
مجموعہ‏49.2 اوورز227   
پاکستان (گیند بازی)امرو
وسیم اکرم100493
عاقب جاوید102272
مشتاق احمد101413
اعجاز احمد30130
عمران خان6.20431
عامر سہیل100490