[ریکارڈز] ایک روزہ کرکٹ کی تمام ہیٹ ٹرکس

سری لنکا کے نوجوان گیند باز تھیسارا پیریرا نے صرف 38 ویں ایک روزہ میں ہیٹ ٹرک کرنے کا کارنامہ انجام دے کے تاریخ کے صفحات میں اپنا نام محفوظ کرا لیا ہے۔ وہ سری لنکا کی تاریخ کے چوتھے باؤلر ہیں جنہیں یہ انوکھا اعزاز حاصل ہوا ہے ان سے قبل چمندا واس دو مرتبہ اور لاستھ مالنگا ریکارڈ تین مرتبہ یہ سنگ میل عبور کر چکے ہیں جبکہ ایک مرتبہ فرویز مہاروف بھی ہیٹ ٹرک کر چکے ہیں۔

پیریرا سری لنکن کرکٹ تاریخ میں چوتھے باؤلر ہیں جنہوں نے ہیٹ ٹرک کا کارنامہ انجام دیا (تصویر: AFP)

پیریرا سری لنکن کرکٹ تاریخ میں چوتھے باؤلر ہیں جنہوں نے ہیٹ ٹرک کا کارنامہ انجام دیا (تصویر: AFP)

یوں یہ سری لنکا کی تاریخ میں مجموعی طور پر ساتواں اور پاکستان کے خلاف پہلا موقع تھا کہ کسی گیند باز نے مسلسل تین گیندوں پر حریف بلے بازوں کی وکٹیں حاصل کی ہوں۔ لاستھ مالنگا ایک روزہ کرکٹ میں تین مرتبہ ہیٹ ٹرک کرنے کا ریکارڈ رکھتے ہیں جو آج تک دنیا کے کسی باؤلر نے نہیں کیں۔

مالنگا کی پہلی ہیٹ ٹرک ہی ایک لحاظ سے بہت انوکھی تھی جب انہوں نے 2007ء کے عالمی کپ کے دوران جنوبی افریقہ کے خلاف 4 گیندوں پر 4 وکٹیں حاصل کرنے والے پہلے باؤلر بننے کا اعزاز حاصل کیا۔ان کے علاوہ یہ ریکارڈ کسی گیند باز کے پاس نہیں کہ انہوں نے ڈبل ہیٹ ٹرک کی ہو۔ لاستھ مالنگا نے اپنی دوسری ہیٹ ٹرک عالمی کپ 2011ء میں کینیا کے خلاف کولمبو میں کی جبکہ اسی میدان پر انہوں نے گزشتہ سال اگست میں آسٹریلیا کے خلاف ہیٹ ٹرک کرنے کا اعزاز بھی حاصل کیا۔

مالنگا کے ہم وطن چمندا واس نے اپنی پہلی ہیٹ ٹرک دسمبر 2001ء میں کولمبو میں زمبابوے کے خلاف کی جبکہ دوسری و آخری ہیٹ ٹرک بنگلہ دیش کے خلاف فروری 2003ء میں کی۔

پاکستان کی جانب سے وسیم اکرم اور ثقلین مشتاق کو دو، دو مرتبہ ہیٹ ٹرک کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔ وسیم اکرم نے اکتوبر 1989ء میں شارجہ میں ویسٹ انڈیز کے خلاف اور اگلے سال اسی میدان میں آسٹریلیا کے خلاف مسلسل تین گیندوں پر تین حریف بلے بازوں کو ٹھکانے لگایا جبکہ آف اسپنر ثقلین مشتاق نے نومبر 1996ء میں زمبابوے کے خلاف پشاور میں ہیٹ ٹرک کی اور اسی حریف کے خلاف 1999ء کے عالمی کپ کے دوران اوول کے مقام پر ہیٹ ٹرک کی۔

ایک روزہ کرکٹ کی تاریخ کی پہلی ہیٹ ٹرک پاکستان کے گیند باز جلال الدین نے 1982ء میں کی جب انہوں نے حیدرآباد کے نیاز اسٹیڈیم میں آسٹریلیا کے روڈنی مارش، بروس یارڈلے اور جیف لاسن کو آؤٹ کیا۔

ہم قارئین کی دلچسپی کے لیے ایک روزہ کرکٹ میں اب تک ہونے والی تمام 32 ہیٹ ٹرکس پیش کر رہے ہیں۔ امید ہے معلومات میں اضافے کا باعث بنیں گی۔

ایک روزہ بین الاقوامی کرکٹ میں ہیٹ ٹرک کرنے والے گیند باز

گیند باز ملک بمقابلہ بمقام بتاریخ
جلال الدین پاکستان آسٹریلیا حیدرآباد 20 ستمبر 1982ء
بروس ریڈ آسٹریلیا نیوزی لینڈ سڈنی 29 جنوری 1986ء
چیتن شرما بھارت نیوزی لینڈ ناگپور 31 اکتوبر 1987ء
وسیم اکرم پاکستان ویسٹ انڈیز شارجہ 14 اکتوبر 1989ء
وسیم اکرم پاکستان آسٹریلیا شارجہ 4 مئی 1990ء
کپل دیو بھارت سری لنکا کلکتہ 4 جنوری 1991ء
عاقب جاوید پاکستان بھارت شارجہ 25 اکتوبر 1991ء
ڈینی موریسن نیوزی لینڈ بھارت نیپئر 25 مارچ 1994ء
وقار یونس پاکستان نیوزی لینڈ ایسٹ لندن 19 دسمبر 1994ء
ثقلین مشتاق پاکستان زمبابوے پشاور 3 نومبر 1996ء
ایڈو برینڈس زمبابوے انگلستان ہرارے 3 جنوری 1997ء
انتھنی اسٹورٹ آسٹریلیا پاکستان ملبورن 16 جنوری 1997ء
ثقلین مشتاق پاکستان زمبابوے اوول 11 جون 1999ء
چمندا واس سری لنکا زمبابوے کولمبو 8 دسمبر 2001ء
محمد سمیع پاکستان ویسٹ انڈیز شارجہ 15 فروری 2002ء
چمندا واس سری لنکا بنگلہ دیش پیٹرمیرٹزبرگ 14 فروری 2003ء
بریٹ لی آسٹریلیا کینیا ڈربن 15 مارچ 2003ء
جیمز اینڈرسن انگلستان پاکستان اوول 20 جون 2003ء
اسٹیو ہارمیسن انگلستان بھارت ناٹنگھم یکم ستمبر 2004ء
چارل لینگویلٹ جنوبی افریقہ ویسٹ انڈیز بارباڈوس 11 مئی 2005ء
شہادت حسین بنگلہ دیش زمبابوے ہرارے 2 اگست 2006ء
جیروم ٹیلر ویسٹ انڈیز آسٹریلیا ممبئی 18 اکتوبر 2006ء
شین بونڈ نیوزی لینڈ آسٹریلیا ہوبارٹ 14 جنوری 2007ء
لاستھ مالنگا سری لنکا جنوبی افریقہ گیانا 28 مارچ 2007ء
اینڈریو فلنٹوف انگلستان ویسٹ انڈیز سینٹ لوشیا 3 اپریل 2009ء
فرویز مہاروف سری لنکا بھارت دمبولا 22 جون 2010ء
عبد الرزاق بنگلہ دیش زمبابوے ڈھاکہ 3 دسمبر 2010ء
کیمار روچ ویسٹ انڈیز نیدرلینڈز دہلی 28 فروری 2011ء
لاستھ مالنگا سری لنکا کینیا کولمبو یکم مارچ 2011ء
لاستھ مالنگا سری لنکا آسٹریلیا کولمبو 22 اگست 2011ء
ڈینیل کرسچن آسٹریلیا سری لنکا ملبورن 2 مارچ 2012ء
تھیسارا پیریرا سری لنکا پاکستان کولمبو 16 جون 2012ء

Article Tags

Facebook Comments